گہرائی اور گڑھوں کے بارے دلچسپ اعدادوشمار (حصہ دوم)

انسانوں کے پاس موجود جدید ترین ٹیکنالوجی کی مدد سے ہم زمین میں کتنا گہرا گڑھا کھود سکتے ہیں؟ آئیے اس سلسلے میں سامنے آنے والے چند مزید اعداد و شمار کے بارے اپنے دلچسپ معلومات پیج کے دوستوں کو بتاتے ہیں۔ پہلا حصہ میں آپ نے 15 اعدادوشمار پڑھے تھے مزید پندرہ دلچسپ اعدادو شمار حاضر ہیں۔
16۔ 700 میٹر کی گہرائی میں چلی کی ایک کان میں 2010ء میں حادثہ ہوا تھا۔
17۔ 970 میٹر گہری بنگھم کان دنیا کا سب سے گہرا گڑھا ہے۔اس گڑھے میں اگر برج الخلیفہ کی عمارت بنائی جائے تب بھی وہ سطح زمین سے 100 میٹر نیچے ہوگی۔
18۔ فن لینڈ کے ایک بینڈ ایگانائز نے دنیا کے گہرے ترین مقام یعنی 1410 میٹر کی گہرائی میں ایک کنسٹرٹ کیا تھا۔
19۔ روس کی جھیل بیکا ل کی گہرائی 1642 میٹر ہے۔
20۔ امریکی ریاست ایریزونا میں واقع آبی درے گرینڈ کینین کی زیادہ سے زیادہ گہرائی 1857 میٹر ہے۔
21۔ زمین پر سب سے گہرا غار 2197 میٹر گہرا ہے، جو جارجیا میں واقع ہے۔
22۔ جنوبی افریقا میں واقع مواب کھوٹ سونگ کان کی گہرائی 3132 میٹر ہے۔لفٹ کے زمین سے نیچے تک جانے میں ساڑھے چار منٹ لگتے ہیں لیکن اگر کوئی لفٹ کے بغیر کان میں گر جائے تو اسے سطح سے ٹکرانے میں 25 سیکنڈ لگیں گے۔
23۔3600 میٹرکی گہرائی میں بھی بہت سے کثیر خلیائی جاندار دریافت ہوچکےہیں۔
24۔جنوبی افریقا میں واقع ایک گہری ترین کان کا گہرا ترین مقام 4000 میٹر گہرائی میں ہے۔یہاں زمین سے نیچے جانے اور آنے میں ایک گھنٹہ لگتا ہے اور یہاں کا درجہ حرارت 66 ڈگری سینٹی گریڈ ہوتا ہے۔
25۔سمندر کے نیچے اوسط گہرائی 6000 میٹر ہے۔
26۔ سمندر میں گہرا ترین مقام ماریانا ٹرنچ ہے، جس کی گہرائی 10994 میٹر ہے۔
27۔کولا سپر ڈیپ ہول کی گہرائی 12262 میٹر ہے۔ یاد رہے کہ فضا میں پرواز کرنے والے تجارتی جہاز اوسطاً 11887 میٹر بلندی پر پرواز کرتے ہیں۔کولا سپر ڈیپ ہول ایک روسی منصوبہ تھا، جس کا مقصد زمین کی اوپری تہہ میں سوراخ کرنا تھا لیکن کھدائی کا کام اصل ہدف کے تہائی تک ہی پہنچ سکا کیونکہ اس گہرائی میں درجہ حرارت 180 ڈگری سینٹی گریڈ تھا، جس کی وجہ سے کھدائی کرنے والے آلات کام نہیں کر سکتے تھے۔حیرت کی بات ہے کہ یہ سوراخ زمین پر صرف 23 سینٹی میٹر یا 9 انچ چوڑا ہے۔
اس کا مطلب ہے کہ اس میں کوئی انسان تو نہیں گر سکتا لیکن اگر اس میں کوئی چیز پھینکی جائے تو اسے نیچے سطح سے ٹکرانے میں 50 سیکنڈ لگیں گے۔
28۔ کچھ عرصہ پہلے تک کولا سپر ڈیپ ہول کو بھی زمین میں کھودا گیا گہرا ترین گڑھا سمجھا جاتا تھا لیکن Z44-Chavyo نے کولا سپر ڈیپ ہول کا ریکارڈ بھی توڑ دیا۔ روس میں ہی واقع اس کنویں کی گہرائی 12376 میٹر ہے۔تیل اور گیس کی تلاش میں کھودے گئے اس کنویں میں برج الخلیفہ جیسی 15 عمارتیں اوپر نیچے کھڑی کی جا سکتی ہیں۔
29۔ زمین کا اوپری قشر تقریباً 70 ہزار میٹر یعنی 43.5 میل موٹا ہے جبکہ زمین کا مرکز سطح زمین سے 6371 کلو میٹر یا 3959 میل نیچے ہے۔بظاہر ایسا لگتا ہے کہ انسان کے خلا میں آگے بڑھنے کی رفتار زمین کی گہرائی میں جانے کی رفتار سے کافی زیادہ ہے۔
30۔ آر ایم ایس ٹائی ٹینک کی باقیات زیرسمندر تقریبا 3800 میٹر کی گہرائی میں دو بڑے ٹکڑوں کی شکل میں آج تک پڑی ہوئی ہیں۔ یہ وہ بدقسمت جہاز تھا جو کہ اپنے پہلے سفر میں ہی اپریل 1912ء کو ڈوب گیا تھا۔

[Total: 0    Average: 0/5]
Spread the love

اپنا تبصرہ بھیجیں